سچی یاری سب پر بھاری۔۔!! ترکی کا پاکستان سے متعلق شاندار اعلان، دشمنوں کے دانت کھٹے کر دینے والی خبر آگئی

ترکی نے مسئلہ کشمیر سے متعلق پاکستانی مؤقف پر کہا ہے کہ ترکی مسئلہ کشمیر اور آذربائیجان تنازع پر پاکستان کے اصولی مؤقف کے ساتھ کھڑا ہے۔ قومی اخبار کی رپورٹ کے مطابق یہ بات ترکی کے قومی دفاع کے وزیر خلوصی آقار نے پاک بحریہ کے سیکینڈ میلجم کلاس کورویٹ کے تعمیراتی کام کے آغاز کی تقریب

سے خطاب کرتے ہوئے کہی، تقریب کا انعقاد کراچی شپ یارڈ اینڈ انجینیئرنگ ورکس (کے ایس اینڈ ای ڈبلیو) میں کیا گیا تھا۔ میلجم کلاس کورویٹس پاک بحریہ کے بیڑے میں سب سے جدید ٹیکنالوجی کے حامل اسٹیلتھ سرفیس پلیٹ فارمز ہیں، یہ جہاز جدید ترین ہتھیار اور سینسرز سے لیس ہیں جس میں سطح سے سطح اور سطح سے فضا میں مار کرنے والے میزائل اور آبدوزوں کو

نشانہ بنانے والے ہتھیار اور کمانڈ اینڈ کنٹرول سسٹم شامل ہے۔ اس طرح کے جہازوں کا پاکستانی بحری بیڑے میں شامل ہونا پاک بحریہ کی صلاحیتوں کو بڑھانے کے ساتھ ساتھ بحرہ ہند خطے میں امن، سیکیورٹی اور طاقت کے توازن میں معاون ہوگا۔ تقریب میں وزیر دفاعی پیداوار زبیدہ جلال، چیف آف نیول اسٹاف ایڈمرل محمد امجد خان نیازی موجود تھے جبکہ مہمان خصوصی کے طور پر ترکی کے قومی دفاع کے وزیر خلوصی

آقار نے شرکت کی۔ اس موقع پر تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مہمان خصوصی نے پاک بحریہ میلجم کورویٹ کے تعمیراتی کام کے آغاز کو وزارت دفاعی پیداوار، پاک بحریہ اور ترک کمپنی ایم / ایس اسفت اور کے ایس اینڈ ای ڈبلیو کے لیے ایک تاریخی موقع قرار دیا۔ انہوں نے ترکی کی سرکاری دفاعی کمپنی اسفت اور کے ایس اینڈ ای ڈبلیو کے تکنیکی لحاظ سے جدید کورویٹ بنانے کے عزم اور لگن کو سراہا۔ ساتھ ہی انہوں نے یہ بھی کہا کہ ترکی، مسئلہ کشمیر اور آذربائیجان تنازع پر پاکستان کے اصولی مؤقف کے ساتھ کھڑا ہے۔

دوسری جانب تقریب سے خطاب میں وزیر دفاعی پیداوار زبیدہ جلال نے بھی کراچی شپ یارڈ کی کارکردگی کو سراہا اور نشاندہی کی کہ پاکستان کی جہازوں کی مقامی طور پر تیاری کی پالیسی سب سے آگے ہے، ساتھ ہی انہوں نے یہ بھی کہا کہ جدید ترین جنگی جہاز کی پاکستان کے اندر ہی تیاری ہوتے دیکھنا خوش آئند ہے۔ قبل ازیں کے ایس اینڈ ای ڈبلیو کے ایم ڈی ریئر ایڈمرل اطہر سلیم نے مہمان خصوصی کا استقبال کیا، انہوں نے اس بات پر بھی روشنی ڈالی کی کہ کراچی شپ یارڈ

حکومت اور پاک بحریہ کے دفاعی شپ بلڈنگ انڈسٹری میں خود انحصاری جیسے طے کردہ اہداف سے پوری طرح آگاہ ہے، انہوں نے زور دیا کہ برادر ملک ترکی کے ساتھ اس طرح کے بڑے منصوبوں کے ذریعے مقامی جنگی جہازوں کی تعمیر اور دوسرے دفاعی اہداف میں تعاون کی نئی راہیں کھلیں گی۔ ان کا کہنا تھا کہ کورویٹ کی پاکستان میں تیاری سے مقامی جہاز سازی کی صنعت اور کے ایس اینڈ ای ڈبلیو کی صلاحیتوں

میں اضافہ ہوگا، یہ جہاز نئے جدید بحری جہاز کے معیار کے مطابق اسٹیلتھ فیچر کے ساتھ تیار کیے جارہے ہیں جبکہ دوسرا میلجم کلاس کورویٹ 2024 کی پہلی ششماہی میں پہنچا دیا جائے گا۔ علاوہ ازیں تقریب میں ایم/ایس اسفت، ترکی کے نمائندوں سمیت استنبول نیول شپ یارڈ، حکومت پاکستان، پاک بحریہ اور کے ایس اینڈ ای ڈبلیو کے نمائندوں نے بھی شرکت کی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں