اب بھی کہو ! ڈی جی آئی ایس آئی اور آرمی چیف کی سلیکشن کے حوالے سے میرا فیصلہ غلط تھا۔۔۔!!! وزیراعظم عمران خان نے قوم کی آنکھیں کھول دیں

گلگت (ویب ڈیسک) وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ڈی جی آئی ایس آئی اور آرمی چیف کو منتخب کرنا درست فیصلہ تھا کیونکہ یہ ڈاکو ان کیخلاف باتیں کررہے ہیں جس کا مطلب ہے کہ یہ درست لوگ ہیں۔ گلگت بلتستان کے قومی دن کے موقع پرآزادی پریڈ کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ جمہوریت کے نام لیوا سیاستدان ہماری فوج کیخلاف بیان بازی کررہے ہیں۔

ہماری حکومت جب ان سے بلیک میل نہیں ہوئی تو انہوں نے اپنی بندوقوں کا رخ پاک فوج کے سربراہ اور آئی ایس آئی کے چیف کی جانب موڑ دیا۔ عمران خان نے کہا کہ میں اللہ کا لاکھ شکر ادا کرتا ہوں کہ میں نے آرمی چیف اور آئی ایس آئی کے سربراہ کو منتخب کیا اور یہ میری سیلیکشن بالکل درست ہے کیونکہ اگر یہ ڈاکو ان کے خلاف بول رہے ہیں تو اس کا مطلب یہی ہے کہ یہ درست لوگ ہیں ۔نریندر مودی کا مقصد پاکستان میں انتشار پھیلانا ہے،بھارت نے پلان کیا ہوا تھا کہ پاکستان میں شیعہ سنی فسادات پھیلائے جائیں اور بڑے مذہبی لیڈروں کو قتل کرنے کا منصوبہ بنایا ہوا تھا ۔ میں شکریہ ادا کرتا ہوں اپنی ایجنسیز کا جنہوں نے نہایت خوش اسلوبی سے اس انتشار کو پھیلنے سے روکا۔انہوں نے کہا کہ میں پاکستان کے عوام کو بتانا چاہتا ہوں کہ فوج کسی بھی ملک کے لیے انتہائی ضروری ہے، ایک مضبوط فوج ایک مضبوط ملک کی علامت ہے، اسلامی ممالک کا حال آپ کے سامنے ہے، ہمیں اپنی پاک فوج پر فخر ہونا چاہیے۔گلگت کے یوم آزادی پر گلگت سکاؤٹس کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں جنہوں نے ظالم ڈوگرہ راج کے خلاف جنگ کی اور آزادی حاصل کی۔ فوج کسی بھی ملک کی طاقت ہوتی ہے، اپنے فوجی نوجوانوں کی قربانیوں کو رائیگاں نہیں جانے دیں گے ۔ سردار ایاز صادق جیسے میر صادقوں کے الزامات کا بھی جواب دیں گے اور ہر موقع پر پاک فوج کے ساتھ کھڑے رہیں گے ۔ اپوزیشن کو صرف این آر او چاہیے، وہ چاہتے ہیں کہ عمران خان ان کی کرپشن معاف کردے، یہ ناممکن ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں