میرے جیتے جی تم لوگ وائرس کو میرے جسم میں داخل نہیں کر سکتے

جیل میں مرے جسم میں کرونا وائرس داخل کرنے کی کوشش کی گئی ۔ کفایت اللہ نےدعویٰ کر دیا ۔ تفصیلات کے مطابق جیل سے رہائی مفتی کفایت اللہ نے بھرے مجمع سے خطاب کے دوران دعوی کیا ہے کہ جب مجھے پکڑا گیا تو 14دن قرنطینہ میں رکھا ، 14دن کے بعد ایک ڈاکٹر نے مجھے کہا آپ بالکل ٹھیک ہیں ، آپ میں مہلک وائرس کی کوئی علامت نہیں ہے پھر ایک اور ڈاکٹروں کی ٹیم مرے پاس آئی اور انہوں نےکرونا ٹیسٹ کرنے کی کوشش کی تو میں نے صاف انکار کر دیا اور کہا میں بالکل صحت مند ہوں،وہ واپس لوٹ گئے ۔ مفتی کفایت اللہ نے مزید کہا ہے کہ کچھ دن گزرنے کے بعد

ڈاکٹروں بھیس میں ڈاکوئوں کی ٹیم جیل میں آئی ،جنہوں نے ڈاکٹروں کی کٹس پہن رکھیں تھیں ،یہ لوگ مرے جسم میں کرونا وائرس منتقل کرکے مجھے قتل کرنا چاہتے تھے ۔ مجھے قتل کر دو پھر میرے جسم میں جراثیم داخل کر دینا ، میرے جیتے جی تم لوگ مہلک وائرس کو میرے جسم میں داخل نہیں کر سکتے ۔ جب اس سے متعلق جیل کے باقی قیدیوں کو معلوم ہوا کہ مفتی کفایت کی جسم میں کرونا ڈالنے کی کوشش کی جارہی تو انہوں جیل میں شدید احتجاج اور بھوک ہڑتال کی بھی دھمکی دی تھی ۔ جس کے بعد وہ وہاں سے بھاگ گئے ، آج اللہ کے فضل کرم کیساتھ میں آپ لوگوں کے بیچ زندہ کھڑا ہوں ۔

Check Also

اگر-روزانہ-ایک

اگر روزانہ ایک کیلا کھایا جائے تو

ہارٹ اٹیک اور فالج جیسی خطرناک بیماریاں آج کل تشویشناک حد تک عام ہوچکی ہیں …